Featured Post

Something else

No its not writer's block Its something else Just wondering why am I not writing much these days!

Wednesday, December 14, 2016

We won't be the same

We don't live again
We will not visit the same place twice
Even when we do, neither the place is same nor us
Time leaves us behind and moves ahead
And in its running, we change
step by step, moment to moment
So do not complain
When you find me, not the same
If ever we meet again
We wont be the same.

Sunday, December 11, 2016

J. December 2016

Some deaths have more profound impact than some lives
You did not influence me before as much as you are doing now
We lost a good human being and a good soul from the face of earth
But the imprints you left behind will be spreading positive energy until the years to come
I shall always miss you. 

Monday, December 5, 2016

Morning Coffee

This morning coffee
With all its bittersweetness
On a chilled December morning
Where everything is hidden
Behind the foggy horizon
Reminds me terribly
Of you.

Thursday, December 1, 2016

O December

Oh you have arrived early
O December
This time last year
Was not much different
In the silence of a chilled night
I was lonely, but
With a tiny ray of hope
Rekindling inside me
This time this year
I'm still lonely
But more so, since
The hope has abondoned
Me too.

Thursday, November 24, 2016

غلام فریدا


جنیاں تن میرے تے لگیاں ، تینوں اک لگے تے توں جانے

غلام فریدا دل اُوتھے دیئیے جتھے اگلا قدر وی جانے

Sunday, November 20, 2016

In pain

When there is pain, time stands still
And that's when we want it to
Run fast

Saturday, November 19, 2016

Gulzar once again


گلوں کو سننا ذرا تم، صدائیں بھیجی ہیں
گلوں کے ہاتھ بہت سی، دُعائیں بھیجی ہیں

جو آفتاب کبھی بھی غروب ہوتا نہیں
ہمارا دل ہے، اسی کی شعاعیں بھیجی ہیں

تمہاری خشک سی آنکھیں، بھلی نہیں لگتیں
وہ ساری یادیں جو تم کو رُلائیں، بھیجی ہیں

سیاہ رنگ، چمکتی ہوئی کناری ہے
پہن لو اچھی لگیں گی، گھٹائیں بھیجی ہیں

تمہارے خواب سے ہر شب لپٹ کے سوتے ہیں
سزائیں بھیج دو، ہم نے خطائیں بھیجی ہیں

اکیلا پتہ ہوا میں بہت بلند اُڑا
زمیں سے پاؤں اُٹھاؤ، ہوائیں بھیجی ہیں

_______ گلزار

Wednesday, November 16, 2016

Alternatives

Somehow we find alternatives
Productive or may be not so productive
But they help us to forget
situation that appranetly seems unforgettable

Monday, November 14, 2016

super moon (14-11-2016)

How full and bright and beautiful
It may seem,
This super moon tonight
Has been condemned
To suffer From
loneliness 

Tuesday, November 8, 2016

long-lost love

It happens sometimes 
Sometimes more frequently 
When going on with a set routine
With times of happiness and 
Moments of sorrow
With tons of work and
Less of rest
When out of the blue
In the blink of an eye
Under the shadows of 
Dark fluttering eyes lash
Flash backs a moment of
Long-lost Love

Monday, October 31, 2016

Forgotten

For those who thought they are unforgettable
It isn't their fault after all
It was an absurd gesture from us that made them feel oh so special. The God of love who is to be falsely worshipped while He loves no one but Himself.
And then it may come as a surprise when someone tells them, it's finally over.
Those pangs of longings and emotional feelings are finally buried under the heavy sand of routine life.
Not that it was easy, but it has happened.
Finally you are forgotten.

Saturday, October 29, 2016

Some News

They say no news is good news
At times this doesn't turn out to be true

At times we need to hear about those who are gone
Any sound, any image, any news

Some rain, some sunshine, some fragrance
Some remains of the footprints

Some news is always awaited.


Tuesday, October 25, 2016

Im burning , yet again

I'm burning Yet again
In this early autumn night
Far from the reach of
A gentle comforting hand
Away from the presence of
A warm soothing embrace
All I have is this solitude and
I'm burning yet  again

Friday, October 21, 2016

what a waste

We don't weep because we miss someone
We cry because we miss our deep emotions
Appeared to be wasted

Sunday, October 16, 2016

Dry Eyes

It was so good when my tears were so frequent.
It's so painful to weep with dry eyes

The circle of time

Sometimes
We find ourselves
Standing on the same grounds
From where the unseen journey
Had begun


Sometimes
time moves on and yet
We remain behind
Torn, forlorn and in agony

Monday, October 10, 2016

عشق نے یوں ہمیں نہال کیا

ایک اک   خواب پائمال  کیا 
عشق نے یوں ہمیں نہال کیا 

مہر بہ لب  پھر لوٹ آے 
پاس وفا کا احتمال کیا 

اتنی آسودہ قربتوں کے لیے 
تلخی انتظار نے نڈھال کیا 

یوں نہ تھا شاید یوں ہوگا 
خود سے ہی ہر سوال کیا 

دوست  نے اپنے فائدے کے لیے 
بار ہا  ہم کو استمعال کیا 


Tuesday, October 4, 2016

عجیب شخص

عجیب   شب تھی 
جس کے آخری کنارے پر 
امید کا سورج  نہیں ابھرتا تھا 

عجیب دن تھا 
سمے  کی دوڑ  میں  جو 
وحشت زدہ سا لگتا تھا 

عجیب  شام تھی 
جو  بے قرار آنکھوں میں 
شفق کی سرخی  بھرتی  جاتی تھی 

عجیب چاند تھا 
وصال کی رت کا  جو 
کوئی  پیام نہ لاتا تھا 

عجیب شخص تھا 
موسم گل کا  اب بھی 
انتظار کرتا تھا 

Sunday, October 2, 2016

My emptiness

Me and my emptiness

The time is moving on
But the dial of my
Beating heart
Has been left behind
Somewhere in a foreign land
Where our paths met

Wednesday, September 28, 2016

The link

whether be it you or me
The distance which keeps us apart
Is the one which keeps us alive

The link which connects the souls
Is deeper and stronger
Than the miles separating

Monday, September 26, 2016

This never ending distance

I walk on them
The falling leaves on the ground
And they cry out in a sound
Akin to my hearts whispers
As we both moan together
At the distance, which
Lies between you and me

Sunday, September 25, 2016

An special moment

Some moments make us feel
Differently
Though that feeling would have remained with you for years
Even then
Your level of perception
Your magnitude of feelings change
In that one moment
That is what makes it special.


Wednesday, September 21, 2016

An old pal

After a gap of many months
My old friend has come back to me
Dear insomnia
I truly missed you!

Tuesday, September 20, 2016

question?

And now in the late hour of this silent night
I keep wondering
Was it a dream where we made memories?
Or is this a dreaming lonely track
At the end of which
I will open my eyes
To find you?

Sunday, September 18, 2016

Reality

The dreams as we know
Would remain dreams
even if they love to
Hang around your image
Once the eyes flutter open
You become a distant
Reality

Friday, September 16, 2016

Still

And each time when I think I know you well
It turns out You are still an stranger

Tuesday, September 13, 2016

Eid speacial

So Eid revisited us today. In September 2016.
 It wouldn't have felt like eid if there weren't some special people in life.
Wish they would stay around forever.
Eid is about love. And lovely people.

Saturday, September 10, 2016

Growing silent

Sometimes you simply don't want to speak and want them to understand.

And when people who used to understand you through your quietness, one grows silent.

As silent as wall.

They notice, they watch, they even feel but grow silent.


Monday, September 5, 2016

Love or Lord

When fever makes you stay up the night and nothing relieves you of pain.

There could be two options where you may seek comfort.

Your love and your lord .


Sunday, September 4, 2016

Some books

There are some books really really worth reading in life.

After finishing them up, No other book can catch your attention

A chronic reader may stop reading.

Some old habits may be broken.

Some lessons learned differently.

Wednesday, August 31, 2016

Happiness

Seeking the one running away from you is of no use.
Let them run away.
A phase, an era and times
All come to an end
Yet the footprints that are left behind
May tell you the worthiness
Of your togetherness
And the memories that have been collected
Would Surely bring back
Happiness.

Monday, August 29, 2016

تیرے بغیر زندگی

پُرسشِ غم کا شکریہ ، کیا تجھے آگہی نہیں 
تیرے بغیر زندگی، درد ہے زندگی نہیں 
دور تھا اک گزر گیا ، نشہ تھا اک اُتَر گیا 
اب وہ مقام ہے جہاں شکوہٴ بیرخی نہیں 
تیرے سوا کروں پسند، کیا تری کائنات میں 
دونوں جہاں کی نعمتیں ، قیمتِ بندگی نہیں 
لاکھ زمانہ ظلم ڈھائے ، وقت نہ وہ خدا دکھائے 
جب مجھے ہو یقیں کہ تُو، حاصلِ زندگی نہیں 
دل کی شگفتگی کے ساتھ، راحتِ مےکدہ گئی 
فرصتِ مہ کشی تو ہے ، حسرتِ مہ کشی نہی
زخم پے زخم کھاکے جی ، اپنے لہو کے گھونٹ پی 
آہ نہ کر ، لبوں کو سی ، عشق ہے دل لگی نہیں 
دیکھ کے خشک و زرد پھول ، دل ہے کچھ اس طرح ملول 
جیسے تری خزاں کے بعد ، دورِ بہار ہی نہیں
شاعر : احسان دانش

Thursday, August 25, 2016

Darker skies

If you are able to pen down your sadness
You are an author
If You can not
It persists for longer durations
Where you keep on looking for
The reason of it all
Like you look for stars
On the darker skies

Wednesday, August 24, 2016

like another

As with those which had gone
This night will also pass
Ending with a new beginning
Yet makes me wonder
What is it in darkness
Which brings forth memories
And lit up the night.

Tuesday, August 16, 2016

Distance




“Distance was a dangerous thing, she knew. Distance changed people.”
Rohinton Mistry, A Fine Balance

“She stuck a bookmark in his heart and walked away.”
Saul Williams, She

“Time & distance does wonders for healing & rejuvenating your soul.”
April Mae Monterrosa


“You are reading me; over the boundary of time and distance, I am touching you, not with my hands but with my love.”
Debasish Mridha

“You can feel the distance. It carries a weight that's heavier than anything.” 

― Katie Kacvinsky, Awaken



Monday, August 15, 2016

This phase

And now
After this phase of
Prolong separation
Do not let me
Miss you
Once again

Friday, August 12, 2016

Dear Diary

Dear Diary

I am getting back to you after a long time

Its almost sleeping time now, even slightly bit over, my eyes are burning more than last night. The fever that is burning my skin for last two nights is waiting to take its turn.

I need to finish finalizing my presentation as the time to deliver it is early morning

Still there are aches.

The headache, the body ache, and never to be forgotten heartache!

N

Thursday, August 11, 2016

Indulged

Miss those nights when
Dreams appeared reality
And reality was
resting incessantly
When moon was always there
even in the darkest skies
When there was no sound
but echoing silence
When there was no one
but the two deeply indulged

Monday, August 8, 2016

Nostalgia

Sometimes a reminder may bring nostalgia
Like a reminder of good times
Spent in past

Monday, August 1, 2016

Error

I have got a problem
An in-built error
I keep coming back to all my favorite things
over and over again
favorite songs, books, colors, weathers, stories, drinks, poems
So it's not You
It's my problem
An in-built error

آج جانے کی ضد نہ کرو

وقت  کی  قید میں زندگی ہے مگر 
چند گھڑیاں یہی ہیں جو آزاد ہیں 

ان کو کھو کر مری جان جاں 
عمر  بھر نہ ترستے رہو 

آج جانے کی ضد  نہ کرو 


Saturday, July 30, 2016

Fantasy

You know what I miss the most?

Those silent conversations.

Those eyes and expression.

Those feelings and moment.

And now as I miss them,  they all seem like a fantasy. 

Thursday, July 28, 2016

Helpless

I have seen those who change over time. How the talkative becomes quieter and how the laughter grows in sadness.

I have seen the socializing turning lonelier.

The happier growing mellower.

All for one matter. The smaller as it may seem. The larger than knowing it is.

The easily influencing and capturing.

The change may  be small yet so huge.

It makes you helpless.

Wednesday, July 27, 2016

وحشت

کتنی چپ چاپ سی ہوا ہے 
جیسے کوئی وحشت بولتی  ہو 

Tuesday, July 26, 2016

Those who do not care

They say people change with time. I disagree.
Those who care will always care.
Those who do not, will not ever.
And it's heart breaking to see how people could become stone hearted.
How nothing could effect to melt their heart.


Impossible

Looking back to the words I wrote not some long time back, I wonder where did my words go?

Now that I wonder if ever I'll get back to writing stuff again?

Sometimes we shut down one part of us so that the other half could survive without pain.

This shutting down helps to face the world with open mind closed heart only.

The heart needs to doze off for unlimited time.

That's what makes writing impossible.

Saturday, July 16, 2016

This summer

The same summer four years ago 
changed the dynamics of my life
A name, your name which was so strange
did not remain strange after that
Although you were and still are a stranger 
Your name is - not.

Tuesday, July 12, 2016

The night and I

Such silence
In this dimly darkened night
Or is it inside of me
Bearing this silence
Such similiraties
Between the two of us
When we come
We bring silence
When we watch
We remain silent
When we break
We end up in showers

Sunday, July 10, 2016

On Edhi sahb's death 08-07-16

And sometimes I feel
I strongly feel that
Death is peace
Running after goals And achievements
Pleasure which brings along pain
Excitement which combines with fear
Love which end up in parting
There is sadness linked with happiness
But death is disconnection
Not only from this world
But with all the pain, fear and partings
Death is ultimate
And ultimate is peace!

Saturday, July 9, 2016

I know

Deep down in my heart
I know
Nothing will ever be
Same again between
You and me

Monday, July 4, 2016

Both

Some people arrive in our lives to bring smiles

While a few others to wipe them away

The interesting fact is

We can not forget them both.

Saturday, July 2, 2016

Looking out for

I did not believe it but gradually I'm learning to accept it as a fact.

People look out for things and feelings which they don't find where they expect them to be.

Such as I do.

I look for dignity,  virtues,  values,  respect,  care,  feelings and love in a person to tag them as good human beings.

And all of a sudden,  tonight I am realizing that they had been missing badly from my life for the last twelve years.

And now if I appreciate a member of so called superior gender because he has strong tendency to care and love,  I do not blame myself.

Because I miss it all around me.

Because I yearn to be in a good humans company.


A good human being?

Some people think degrading and humiliating others is the way to prove their so called superiority.
And in top of that they feel they are better than a lot of humans who disobey the Almighty.
When on the other hand they do not know how to love their own family. When nothing comes on the top priority list but money.
And what about virtues and values and love and feelings?

Zero.

Who cares about being a good human being anyway! 

Tuesday, June 28, 2016

Forever

It was only spending time together
That too for such short span
Yet it changed everything
Forever.

Thursday, June 23, 2016

The same You

This soothing wind
plays with my hair
This halo around the moon
makes me lonelier
Nothing changed since
This day, last summer
The same I, wanderer
The same you, farther.

Wednesday, June 22, 2016

Dis-connection

Under the dark sky
the moon shines alone
watching down on me
for I am a lonely soul
wandering along the shore

And I wonder why
And I wonder how
two lonely souls
connect, where
every one is so
Dis-connected

Ungratefulness

Why are people so ungrateful?

It doesn't take much to appreciate. After a long tiring day , all we want is a small gesture of gratitude. I sometimes wonder is it too much to ask for?

On the contrary, the ungratefulness shown on others part make me feel , am I expecting too much?
Is it wrong to expect people to return kindness, even in the form a small gesture?

And it isn't easy to kill expectations, Aren't we all social animals? If we serve, we want return,

Some kind words, some gestures, some grateful behavior?

Is that too much to ask for?

Tuesday, June 21, 2016

Flickering flame

It takes ages to ages to calm the emotions and divert attention
It takes a moment to rekindle the flickering flame of memories
What could be stranger than human emotions? 

Reflection


Sometimes it feels better to close our eyes against the reflection which stirs the memories and make them re-live.

When all you did was such a hard drill to put them to a deep sleep.

Darkness is fine. It hinders reflection. It helps you close your eyes to an image which could have the power to ignite the spark of sleeping memories.







Friday, June 17, 2016

The halo

You can be enchanting and lonely
Like the moon in the dark sky
People seem in awe of you, but
They could not breach the halo
Of loneliness around you
Guess that's what makes you charming
Guess that's what makes you the one.

Wednesday, June 15, 2016

Airwaves

The yearning for a deep silence
shared between the two, who
speak flawlessly, through waves.
The yearning grows deeper though
for although the link has been broken
The feelings echo within the waves

Monday, June 13, 2016

The flipside






“There's just something obvious about emptiness, even when you try to convince yourself otherwise. ”

Sarah Dessen, Lock and Key









“Isn't it weird? The way you remember things when it's gone.”


Sarah Dessen













Sunday, June 12, 2016

Friday, June 10, 2016

Its over, when

You know it's over when
You tend to hear a breakup playlist
and seek refuge in loads of work
When the moon still grabs your sight
Yet it brings on a saddening smile
When you find yourself in the same place
Where once, only once you saw him standing
And now the same space has lost it's fragrance
When still behind the closed eyelids
You see his face but fail
To sketch the exact lines
When still in the rainy evenings
You miss his presence
Know that it's all over

So what?

Multiple factors combine together to lower your spirits and all you want is to break down and cry.
But then crying is also not possible because you have to hide your tears too.
Not even in the darkness of your bedroom.
Not even in the privacy of your workplace.
So you move on and try to find an escape in the form of  writings or sleep.
That is what I have been doing for sometime.
So what now when sleep is no more compassionate towards you?
So what if your words had already abandoned you for good?
So what if in this whole wide world you can not find any one to share your self with?
So what?

Thursday, June 9, 2016

Tuesday, June 7, 2016

Ramadan 2016

As much as we run away from memories, they somehow strikes at odd moments
Like Ramadan
Is here to remind me of you

Saturday, June 4, 2016

Silence is

Silence is rain
having a resonance
felt by those, who
deeply understand

Silence is air
strokes the eyes
tangles the skin
and moves on

Silence is painting
when lines helter-skelter
sketched themselves
into a lovely figure

Silence is music
played in lonely hours
for those who hear
for those who treasure















Wednesday, June 1, 2016

دھند 34

اس رات  دس بجے کے بعد وہ اکیلی نہیں رہی  تھی ، داور   اور لالہ  پھول اور مختلف قسم کے کھانے ، جوس اور سوپ  لے کر اس کے کمرے میں آ گئے تھے ، وہ کچھ اداسی اور کچھ دوائیوں کے زیر اثر  مدہوش سی تھی  داور نے اسے   جھنجھوڑکر جگایا 
"اور کرو شکایتیں ہماری، ہم نے تمھیں اکیلا چھوڑا  ہوا  ہے نا "
میں نے کب کی شکایت؟" وہ نیند سے جاگتی  ہوئی بولی " 

" بس رہنے دو ہنی ، تمھیں یہی  لگتا   ہے نا کہ کسی کو تمہاری پرواہ نہیں ہے 
" یار  جیٹ لیگ  تھا ، سویا پڑا  ہوں جب سے گھر گیا تھا، مگر پلان یہی تھا کہ رات یہیں تمہارے پاس ر کوںگا "

وہ کچھ نہیں بولی، خاموشی سے اسے دیکھتی رہی

"  اب اٹھو بھی ، فریش  ہو جاؤ  پھر مل کر ڈنر کرتے ہیں، میں سب تمہارے پسندیدہ کھانے  لے کر آیا ہوں "
"لیکن مجھے کوئی بھوک نہیں ہے  دانی "

"ہنی ،جو میں کہ رہا ہوں وہ کرتی جاؤ  بس، بھوک خود لگنے لگے گی "
اس نے سہارا دے کر اسے اٹھایا اور واش روم تک پنہچایا ، اور لالہ  کو کھانا  نکالنے  کی ہدایت دیتے ہوے فون پر مصروف ہو گیا

جب تک ہنی شاہ واپس اپنے بستر تک واپس آئ ، لالہ  کھانا لگا چکے تھے ، داور  نے اسے وایٹ  ہاٹ  اینڈ سار  سوپ لا کر دیا ، جو عام  حالات میں زینیا کے لیے  بہت پسندیدہ ہوتا مگر اس  وقت   اسے کچھ بھی  رہا تھا 
"میں یہ سب نہیں سکتی داور ، میں تو بیمار ہوں نا "   
"اچھا تو آپ بیمار ہیں اور  یہ سب کھانا نہیں سکتیں؟، ابھی پوچھتا ہوں آپ کے ڈاکٹر سے کہ آپ کیا  ہیں اور کیا نہیں؟"

"اس وقت تو نہ پچو کل پوچھ  لینا نا ، کافی دیر ہو گئی ہے اب ، "

"نہین  میں تو ابھی پوچھوں گا، وہ فون کان سے لگاے  کہنے لگا." 

اسی لمحے کسی فون کی رنگ ٹون  سنائی دینے لگی ، وہ عمر حیات تھا جو فون ہاتھ میں لئے کمرے میں داخل ہوا تھا 
"آئیے  ڈاکٹر صاحب ، ایک مسلہ  تو حل کریں "

"میں نلکل کوئی مسلہ  حل نہیں کر رہا اس واقت ، شدید بھوک لگی ہے مجھے، تم تیمارداری کرو ،میں تو پہلے کھانا کھاؤں  گا. آئیے لالہ  بسماللہ  کریں"
گہری نیلی تی شرٹ اور جینز میں وہ بہت فریش  لگ رہا تھا ، زینیا کو سمجھ میں آنے لگا تھا کہ یہ سارا پلان داور  اور عمر کا مشترکہ تھا ، اور وہ آج اس کے ساتھ ڈنر کرنے کا پروگرام بنا کر آے  تھے ، وہ  بڑی  حیرت زدہ سی ہو کر خوش ہونے لگی ، اسے تو اب بون مانگے ملنے والی چھوٹی  چھوٹی  خوشیوں پر بھی یقین نہیں اتا تھا 

اس نے خاموشی سے ہاتھ بڑھا کر سوپ کا پیالہ لیا اور پینے لگی، داور  مسکرا کر میز کی جانب بڑھ گیا 

اور پھر خوب زورو شور  کی گفتگو میں دونوں نے کھانا کھایا، لالہ کھاتے ہوے مسکراتے رہے اور وہ خاموشی سے دل  میں خوش ہوتے ہوے ان لوگوں کو دیکھتی رہی جو اس کے اپنے تھے اور اس کا بغیر کہے خیال رکھ رہے تھے ، اچانک ہی اس کی تنہائی مسکرانے لگی تھی ، اس نے پر سکوں ہو کر آنکھیں بینڈ کی اور سر پیچھے ہیڈ  ریسٹ سے ٹکا  دیا 

=================================

Sunday, May 29, 2016

دھند 33

کچھ لوگوں کے آنسو ہم سہ   نہیں سکتے ، یوں لگتا ہے جیسے وہ ہمیں بھگو رہے ہوں 
ڈاکٹر عمر حیات خان نے بیشتر مریضوں کے گھر والوں کو ہسپتال  کی  دیواروں  کے اندر روتے ہوے دیکھا تھا مگر ان   کے آنسو  ان پر اثر انداز نہیں ہوتے تھے، مگر زینیا شاہ کو داور کے ساتھ لگ کر  یوں روتا  ہوا دیکھنا اس کے  بس سے باہر تھا  وہ  کچھ فاصلے  پر موجود  ایک اور مریض کا موا ینا کرنے میں مصروف ہو گیا ، مگر توجہ کا باٹنا اتنا آسان ہوتا تو پھر مشکل کیا تھی 
 پتہ  نہیں کتنے ہی لمحے یوں ہی بیت گئے ، وہ اسٹاف  پیٹر  کے ساتھ  ان  عمر رسیدہ مریض کی  دوا  میں ردو بدل کی بات  طے  کر رہا تھا جب اس نے  زینیا کو کہتے سنا 
"کیا میں بالٹی مور میں ہوں؟" 
اس کا ذہن ابھی اپنے ارد گرد  سے مکمل طور پر شناسا نہیں ہو  پایا تھا ، دوسرے داور  اور عمر کی بہ یک وقت مجودگی بھی اس کے لیے اچھنبے  کی بات تھی 
عمر نے اس کی آواز سن لی تھی اور اسے خوشی تھی کہ اس کا ذہن  اب آہستہ آہستہ ہوش کی سرحد کے قریب ہوتا جا رہا تھا 
وہ دونوں کو باتیں کرتا ہوا چھوڑ کر  احسن شاہ بخاری کو بلانے چل دیا ، 
=====================================================
عجیب  بات تھی  کہ جب وہ  ہوش و خرد سے  بیگانہ تھی  تب وہ  بے چین روح کی  مانند اس کے  گرد منڈلاتا پھرتا تھا   اور اب  جب وہ ائی  سی یو سے کمرے میں منتقل  کر دی گئی تھی تو وہ بے فکر ہو کر اپنے دیگر کاموں میں مصروف ہو چکا تھا ، ڈاکٹر حیدر  اب زینیا شاہ  کے  فالو اپس لے رہے تھے اور عمر  کو  مستقل  اپ ڈٹ بھی   کر رہے تھے

اگلا سارا دن بھی او پی ڈی  نپٹا تے گزر گیا تھا ، وہ اس وقت فریسغ ہوا جب شام ، شب کی دہلیز پر قدم رکھ چکی تھی، وہ  سٹاف کو کافی آرڈر کرنے کی لیے نرسنگ کاونٹر پر آیا تھا جب ڈاکٹر حیدر اسے ملے تھے

" سر آپ مصروف نہ ہوں تو مجھے ڈاکٹر زینیا  کا کیس ڈسکس کرنا تھا " حیدر حالاں کہ  عمر سے کافی جونیئر تھا مگر  وہ اتنا قبل تھا کہ  ڈاکٹر عمر اسے زینیا کا کیس سونپ کر بے فکر ہو چکا تھا

"سر ڈاکٹر صاحبہ  ڈسچارج ہو کر گھر جانا چاہتی ہیں ، وہ کہ رہی ہیں میں بلکل ٹھیک ہوں  ہسپتال میں روکنے کا کوئی جواز نہیں بنتا " میں نے انہیں سمجھانے  کی کافی کوشسش کر لی ہی مگر  وہ مجھے لاما ہو جانے کی دھمکی بھی دے چکی ہیں ، میں تو سخت پریشان ہون سر، پلیز آپ ان کو خود سمجھا لیں ، آپ کی بات ماں لیں گی وہ، ابھی وہ اس اسٹیٹ میں نہیں کہ ہم انہیں گھر جانے دے سکیں "

عمر مسکرا دیا " تم پریشان  نہ ہو حیدر ، میں دیکھ لیتا ہوں ، ویسے کوئی بھروسا  نہیں کہ مادام  اس وقت تک لاما ہو بھی چکی ہوں "

"سر  وہ ایک ڈاکٹر ہوتے ہوے ایسا کیسے کر سکتی ہیں؟"

"وہ سب کچھ کر سکتی ہیں " عمر کا قہقہہ بہت بے ساختہ تھا


======================================

اس نے    دھیمی سی دستک دی، ایک بار اور  دوسری بار ، تیسری بار وہ اندر داخل ہو چکا تھا ،
سامنے وہ آنکھوں پر با یاں بازو رکھے خاموش لیتی تھی، یا شاید سو رہی تھی ، کمرنے  میں انتہائی مدھم روشنی تھی  ، انی کہ اس میں عمر حیات کے لیے  اس کو غور سے دیکھنا بھی مشکل تھا
ہاتھ بڑھا کر اس نے ، اس کے سرہانے کچھ اونچائی پر نسب  بلب روشن کر دیا ،   اسی سمے زینیا نے بازو آنکھوں سے ہٹا کر اسے دیکھا تھا

ہسپتال کے مخصوص مریضوں والے لباس میں وہ  کوئی بھی مریضہ لگ رہی تھی مگر وہ زینیا شاہ نہیں لگ رہی تھی جس نے پہلی ملاقات میں ڈاکٹر عمر کو  شدید متاثر کر دیا تھا

"کسی ہو؟"

" بہت اچھے معالج  ہیں آپ ،  کتنے گھٹوں بعد راؤنڈ  لیتے ہیں وارڈ  کا؟ :

لہجے میں اتنی تپش ضرور تھی  کہ وہ سیدھی عمر کے دل تک پنہچی تھی

" مجھے علم تھا کہ آپ  ریکور کر رہی ہیں ، اس لیے کہ آپ کو  ذمے دار لوگوں کے حوالے کیا ہوا تھا "
"  اور جن ذمے دار لوگوں کے آپ نے مجھے حوالے  کیا  ہوا تھا ان لوگوں کے پاس  اتھارٹی بھی نہیں ہے  کہ مجھے ڈسچارج سکیں " 

سچ تھا ، کسی  ذہین خاتون جو کہ با علم بھی ہو  اور طرح دار بھی، ، سے بحث  کرنا بلکل آسان نہیں ہوتا ، عمر حیات خان بری طرح پھنس چکا تھا 

مجبوراً  اسے اپنی  پروفیشنل زبان  کا  سہارا لینا پڑا 

"ڈاکٹر زینیا ابھی آپ کی صحت اس مرحلے  پنہچی کہ ہم آپ کو  گھر جانے کی اجازت دے سکیں، ابھی کچھ  تفصیلی  مواینہ  اور مزید لیب ٹیسٹ ضروری ہیں  جن کے بعد ہی ہم  فیصلہ لے سکیں گے ، آپ بہتر گھنٹوں کی بے ہوشی کے بعد جاگی ہیں  اور آپ کے نیورونس ابھی  مکمّل طور پر صحتیاب نہیں ہوے ہیں "

"مجھے اپنی فائل دیکھنا ہے " اگلا سوال اس سے بھی مشکل  تھا "
اب پریشان  ہونے کی باری  عمر کی تھی 

" کیا دیکھنا چاہتی ہو فائل میں، مجھ سے پوچھ لو  زینیا " عمر نے اس کے سرہانے بیٹھتے ہوے  رساں سے کہا 

میں اپنی فائل کیوں نہیں دیکھ سکتی ڈاکٹر عمر؟" میں ایک ڈاکٹر ہوں آپ شاید بھول رہے ہیں "

اگر آپ ڈاکٹر نہیں ہوتیں تو شاید میں فائل آپ کے ہاتھ میں دے دیتا ، اس وقت میں کسی بھی قسم کے ذہنی دباؤ سے محفوظ رکھنا چاہتا ہوں تمھیں زینیا "

" مجھے آپ کی لاجک سمجھ نہیں آ رہی ڈاکٹر عمر، میں گھر جانا چاہتی ہوں پلیز "

اس کے لہجے کی بیزاری صاف عیاں  تھی 

ٹھیک ہے  مجھے چند لمحے چاہیے اس فیصلے کے لیے ، لیکن شرط یہ ہے کہ تم خاموشی سے میری بات مانو گی اور جو کہوں گا   وہ کرتی  جاؤ  گی " زینیا نے جواب میں کچھ کہنے کے لیے منہ کھولا ہی تھا مگر عمر کے چہرے پر موجود تاثرات دیکھ کر خاموش ہو گئی 

عمر  بستر سے اٹھ کر اس کے دائیں  جانب آ گیا اور ایک ماہرنیورو لوجست کی طرح اس کو ہدایت دینے لگا وہ خاموشی سے سارے  ٹیسٹ کرتی چلی گئی ، کبھی انگلی سے ناک کو چھوا، کبھی آنکھوں کو گول گول گھمایا ، وہ ڈاکٹر تھی اور اس کے پاس ایعترض   کرنے کی کوئی وجہ نہیں تھی 

 "اٹھو "
"جی ؟

"بستر سے نیچے پیر رکھو اور کھڑی ہو جاؤ "
وہ اب صرف ایک ڈاکٹر تھا ، اور زینیا ایک مریضہ  ، وہ اٹھ کر بیٹھی اور آہستگی سے بستر سے نیچے اترنے  لگی 

اسے ایک دم آنکھوں کے آگے  اندھیرا سا محسوس ہوا تو اس نے نزدیک موجود میز کا سہارا لیا ، عمر صرف خاموشی سے 
اسے دیکھتا رہا، اس نے اسے سہارا دینے کی کوئی کوشش بھی نہیں کی 

وہ  ڈاکڑ تھی اور وہ جو کچھ  اس پر ثابت  کرنا  چاہ  رہا تھا وہ اتنا آسان بھی نہیں تھا 

اس نے  سلیپپرز میں پیر ڈالے اور دھیرے سے بستر کا سہارا چھوڑ کر آگے کو قدم بڑھاے 
عمر وہیں اس کے نزدیک    دونوں بازو سینے پر باندھے  کھڑا اسے دیکھ رہا تھا 
چوتھے قدم کے بعد وہ یک دم ٹھہر گئی ، عمر کی سانس ایک لمحے کو ٹھہری ، مگر وہ بھی زینیا شاہ  تھی ، اور وہ ڈاکٹر عمر پر یہ ثابت  کرنا چاہتی تھی کہ وہ بلکل  نارمل ہے، اس لیے  چند لمحوں بعد پھر آگے کو بڑھنے لگی 

مگر وہ غلط تھی، اس  کا ذھن ابھی مکمّل م طور پر اس کے   جسم  کو سنبھالنے میں ناکام ہو رہا تھا اور یہی وہ بات تھی جو عمر  اسے سمجھانے  کو کوشش کر رہا تھا 

اس  کی آنکھوں کے اگے ایک بار پھر اندھیرا پھیلا تھا اور اس نے سہارے کی لیے اپنا ایک بازو آگے کو بڑھایا تھا، وہ گرنے کو تھی  مگر عمر اس صورت حال کے لیے ذہنی طور پر تیار تھا، اس نے فورا  آگے بڑھ کر اسے تھام لیا ورنہ اگر وہ گرتی تو بہت بری طرح زخمی ہو سکتی تھی 

وہ آہستگی سے اسے تھام کر بستر تک لے آیا اور اور اسے لٹانے کے بعد وہیں اس کے سرہانے بیٹھ گیا تھا 

"تم ٹھیک ہو زینیا؟: وہ اس  کی پیشانی پر ہاتھ رکھ کر پوچھنے لگا 

"ٹھیک ہوں "

"یہی بات تم بغیر بحث  کے بھی مان  سکتی تھیں  نان "  اب پتا لگا  کیوں کیہ  رہا ہوں  کہ  گھر نہیں جا سکتی ہو ابھی ؟"
 عمر کو لگا وہ    رو دے گی 

" میں یہاں  نہیں رہ سکتی  عمر، پلیز ، یہاں سب اتنا ڈپرسسنگ  ہے ، اور میں اتنی اکیلی ہوں، مجھے گھر جانا ہے "

اس کی آنکھوں سے آنسو بیہ  رہے تھے اور یہ وہ نہیں دیکھ سکتا تھا 

"او کے زینیا، کل تک کا وقت دو مجھے ، لیکن تم روو  گی نہیں اب، اور اگر روئیں  تو ایک ہفتہ مزید یہاں ٹھہرنا ہوگا " وہ اس  کے چہرے پر آے  بالوں کو پیچھے کرتا ہوا کہ رہا تھا  اور زینیا اپنے آنسوؤں پر قابو پانے کو کوشش کرنے لگی "

==========================================


A single tear

It wasn't a tear
that ran down
to my lips,
It was a dream
where you said
Good bye.

Tuesday, May 24, 2016

Remoteness

I dread the morning
The night of which
Shows you all along
So near, so close
Like olden days
Yet on opening eyes
The morning arises
With scorching heat
Of reality, of
Remoteness.

Monday, May 23, 2016

Tuesday, May 17, 2016

بس اک ہی نام

رات سن رہی تھی 
اندھیرے کی چلمن  کے اس  پار  
سانس کی تسبیح  پر 
ورد کیا جانے  والا 
وہ بس اک ہی نام   
جو لہو   کی خلوتوں میں 
مانند طواف  گھومتا تھا 
کہ آنکھ  غافل  ہو بھی جاے 
نہ سانس رکتی  ہے 
نہ لہو تھمتا ہے 
اور رات 
وہ پھر لوٹ آتی ہے 
اور سنتی رہتی ہے 
اندھیرے کی چلمن کے اس پار 
وہ بس اک ہی نام 

نازش امین 

Monday, May 16, 2016

Moods

And how I hate this silent, unknown, unexplained gloomy mood of mine.

Nothing could cheer me up, not for the rest of the day, I know.

It wasn't

Once or may twice, we go through times which get adjusted with our body clock and then we follow them as routines
Like waiting

Waiting for a particular dial on the clock
Waiting for some stranger to come along
Waiting for times which do not meant to last longer

And then suddenly that waiting abruptly ends

Your mind and body resists to come out of that time frame but eventually that happens too.

And then those times feel strange too, so strange that you may wonder if they ever existed in this lifetime.

May be it was just a dream and was wishfully transformed into reality.

May be it was nothing and only imagination made it looks so beautiful.

May be it wasn't,  what it was.


Thursday, May 12, 2016

Strange!

It's strange
how little you had shared together
how enormous you have to recall

Monday, May 9, 2016

High tides

It was a smooth sailing
on the waves of emotions
until after
the passing of
many moons
There reflected
your image
enough to bring up
high tides of desire

Fragmentation

Who says it's easy to bear
detachment and broken-ness
for once we are broken
we have to gather
all those pieces
bit by bit, all
shreds and crumbs
slowly and gradually
with bleeding fingers
and wounded spirit
to form, what it had been once
and yet some marks
of detachment remain
some scars would remind
us of fragmentation
  

This makes me write

And there are some melodies that make you feel
and make you react, in one way or other
This is one of them!

https://soundcloud.com/hindisongsvideoslyrics/awari


Main ny dhoonda buhat per
kaheen na mila.......


Tuesday, May 3, 2016

اک خاموشی



خلوت جاں  میں گونجتی 
اک خاموشی 
بہت شور کرتی ہے
دل آباد   کرتی ہے 
تمھیں یاد کرتی ہے 


Monday, May 2, 2016

Those moments

I wonder why
They keep coming back
to me
those moments.
I wonder how
after such length of time
that drifted us apart
for so long
they keep coming back
to me
those moments
which took
so long to
shed off.

Thursday, April 28, 2016

دھند 32

ہسپتال کے کیفے ٹیریا میں بیٹھے وہ تینوں کھوے ہوے سرے ڈھونڈ رہے تھے ، ڈونٹس اس کی ماما  کو بہت پسند تھے  اور اس وقت داور بصد اصرار انہیں ڈونٹس کھلا رہا تھا ، پھر بھی اسے یہ  تکون اچھی نہیں لگ رہی تھی ، جس کی کمی تھی وہ کتنی نزدیک تھی ، اور کتنی دور

وہ کوفی لینے کے لیے نزدیکی کاؤنٹر تک گیا تھا، تب اس نے ماما  کو کہتے سنا تھا
" شاہ ، یہ لڑکا کتنا تہذیب یافتہ ہے ، مجھے ایسے لگ رہا ہے جیسے میں اسے بہت عرصے سے جانتی ہوں  "

داور  کے کانوں تک ان کی آواز با خوبی پہنچ رہی تھی ، گو کہ وہ ان کی اس بیماری کی سب کیفیات  سے واقف تھا مگر پھر بھی درد کی کوئی لہر تھی جس نے اس بار بھی سر اٹھایا تھا ، وہ اس کی ماں تھی اور اسی سے غافل  بھی ، کس قدر ظلم تھا  Alzheimer's disease  ، وہ دل ہی دل میں اس بیماری کو کوسنے لگا
سے کی اذیت سے  گزرنے والے  مریضوں میں ایک نام اس کی ماں کا بھی تھا ، اور میڈیکل سائنس  کبھی کبھی  جس بے بسی سے گزرتی ہے اس میں اس بیماری کا نام سر فہرست تھا

ہسپتال کے اندروں کی طرف واپسی کے سفر میں باتیں کرتے کرتے انہیں احساس نہی ہو سکا تھا ک کتنا وقت بیت چکا ہے 

رات  کافی سے  زیادہ بیت  چکی تھی  ، وہ اپنے والدین کو انتظار گاہ میں چھوڑ کر آئ  سی یو کی جانب جا رہا تھا جب  اس کے فون پر وہ کال  آئی جس نے اسے کچھ حیران کیا ، وہ  ڈاکٹر عمر کی کال تھی 

"داور  تم کہاں ہو ؟"
"ہسپتال میں ، اور کہاں  ، مگر تم اب تک کیوں جاگ رہے ہو عمر، تمہیں آرام کرنا چاہیے "

"میں سو رہا تھا ، ابھی چند لمحوں پہلے سٹاف اگنس کی کال آئی، زینیا نے کچھ موومنٹ کی  ہے ، وہ تم کو دیکھنے کے لیے وارڈ  تک ہو آئی تم اسے ملے ہی نہیں. تمھیں زینیا  کے پاس ہونا چاہیے داور " 

عمر کے لہجے میں اتنی خفگی تھی کہ داور  کی سماعتوں  سے چھپی نہ رہ سکی 
"اوہ  عمر میں تو صرف کیفے ٹیریا تک گیا تھا ماما  اور ڈیڈ  کو لے کر " کیا اس کا مطلب ہے  کہ وہ ہوش میں آ رہی ہے ؟"

ہاں یہ  ممکن ہے ، پلیز تم اس کے پاس جاؤ ، میں بس آ رہا ہوں " 

"عمر تم آرام کر لو یار ، کوئی ایمرجنسی ہوئی تو پھر آ جانا ، ، تمھیں آرام کی ضرورت ہے  "

تم ایک ڈاکٹر کو نہیں بتا سکتے کہ  اس وقت کیا اہم ہے. پلیز اس کے ساتھ رہو ، اس موقع  پر اس کے پاس رہو، میں پہنچ رہا ہوں "
داور  تیزی سے آئی سی یو کی جانب چل دیا ، سٹاف اگنس  ڈاکٹر عمر  کی ہدایت پر وہیں موجود تھیں 
اس نے غور سے زینیا کی جانب دیکھا، بظاھر اس کی کیفیت میں کوئی تبدیلی نہیں تھی، وہ ویسے ہی ساکن  لیٹی  ہوو تھی جیسے ایک گھنٹہ پہلے تھی 
اسٹاف اگنس نے آنکھوں سے کوئی امید افزا اشارہ دیا، شاید اس نے داور  کے چہرے پر چھانے  والی نہ امیدی دیکھ لی تھی 
انہوں نے  داور  کے نزدیک آ کر بہت دھیمے سے لہجے میں اسے  اچھے وقت کی امید دلائی ، اس نے ہولے سے اثبات  میں سر ہلا دیا لیکن صرف اگلے ہی لمحے نے اس کی توجہ  کھینچ لی ، جیسے  کسی مریض نے کوئی سسکی لی ہو ، وہ مڑ  کر ساتھ والے مریض کو دیکھنے لگا جو کافی فاصلے پر موجود تھا ،  اور اس کے بلکل اگلے ہی لمحے میں اسے احساس ہوا کہ یہ آواز تو زینیا کی جانب سے آئی تھی، تیزی سے وہ دونوں اس کی جانب بڑھے 

"ہنی  کیا تم مجھے سن رہی ہو؟" وہ اس کا ہاتھ تھامتے ہوے کہنے لگا 

"پھر جیسے  زینیا کے لبوں سے ایک اور سسکی بلند ہوئی "  داور  نے سٹاف اگنس کی جانب دیکھا 

"اسٹاف پلیز چیک کریں یہ سانس تو ٹھیک سے لے رہی ہیں نان "

اسٹاف اگنس نے اس کو تسلی دی، کہ  سب ٹھیک ہے، اور یہ کہ داور  کو اسے پھر سے پکارنا  چاہیے 
وہ ہنی سے یونہی بات کرنے لگا جیسے بچپن سے کرتا آیا تھا ، انگریزی میں وہ اسے بلاٹی ہوے کہنے لگا 

"ہنی ، مجھے پتا ہے  تم ٹھیک ہو، اور صرف سو رہی ہو، اورکتنا  سوو گی یار ، اب جاگ جاؤ  دیکھو میں کتنے عرصے بعد صرف تم سے ملنے کے لیے یہاں آیا ہوں |

اسے شک سا ہوا تھا شاید، ہنی شاہ کی آنکھیں پھر پھرآ  ئیں تھیں 
ہنی، اپنے بھائی  سے باتیں نہیں کرو گی، کتنے دن ہو گئے یار ہم نے گوسسپس نہیں کیں ، اب جاگ بھی جو نان "

مگر دوسری طرف پھر سے خاموشی تھی 

وہ ہمّت ہارنے  لگا 

اسٹاف اگنس اس کا کندھا تھپتھپا کر خاموشی سے کسی اور مریض کی جانب بڑھ گئیں ، وہ اب وہاں اکیلا تھا ، وہ تھی، پر نہیں تھی 
جانے کتنا سمے بیتا ، وہ وہیں بیڈ  کے کنارے پر ٹکا  بیٹھا تھا م جب کسی نے پیچھے سے آ کر  اس کے کندھے پر ہاتھ رکھا 

وہ عمر تھا 

داور  نے پریشانی سے اس کی جانب دیکھا 
عمر اتنی دیر میں زینیا کے جسم سے لگی مشینوں کی ریڈ نگس پڑھنے لگا 
اسے نے دھیرے سے اس کے خوب صورت  بالوں والے سر پر ہاتھ رکھا ، پھر اس کی انگلیوں نے اس کی پیشانی کو چھوا 
اس کی بھنووں کے درمیان میں پہنچ کر اس کی انگلیوں نے وہاں دباؤ بڑھایا 
اسی لمحے  زینیا کے لبوں سے ایک سسکی برآمد ہوئی اور اس کی پلکوں میں کوئی جنبش ہوئی 
عمر کی آنکھوں میں کوئی چمک بیدار ہوئی، اس نے داور  کو آگے آ کر اسے پکارنے کا اشارہ کیا 
اور وہ اسے بے اختیار پکارتا چلا گیا 

اور جیسے ہنی شاہ کی روح نےاپنا  پکارا جانا سن لیا تھا ، اک بے یقینی کی کیفیت میں آنکھیں کھول کر اس نے ہوش کی اس دنیا میں قدم رکھا تھا ، اور  سب سے پہلے اس نے اپنے سامنے کھڑے  داور  کو دیکھا تھا ، جو اس کا ہاتھ تھامے  اسی کی جانب دیکھ رہا تھا 

"ہنی دیکھو میں تمہارے لیے لوٹ آیا ہوں اور تم کب سے سوئی   پڑی  ہو، اٹھ جاؤ  یار 

اور  ہنی شاہ کی سسکیاں کچھ اور بلند ہونے  لگیں، وہ رو رہی تھی ، اسے جسمانی درد نہیں تھا، اس کی روح زخمی تھی ، اور داور  کو دیکھ کر  اسے کیا کچھ نہیں یاد آیا تھا 

اور داور  اسے روتا دیکھ کر پریشن ہو اٹھا تھا ، اس نے عمر کی جانب دیکھا ، مگر اس کے چہرے پر تو طمانیت پھیلی ہوئی تھی ، اس کی امید بر آئ  تھی ، زینیا شاہ ہوش میں آ چکی تھی 

چند لمحے روتے ہوے گزرنے کے بعد  زینیا نے دوسری جانب دیکھا تھا ، وہاں اس کا مسیحا کھڑا تھا، اس کی آنکھوں سے آنسو مزید تیزی سے بہنے لگے تھے 

==============================





Wednesday, April 27, 2016

Kon aney wala hy

ہر چمکتی قربت میں اک فاصلہ دیکھوں 
کون انے والا ہے کس کا راستہ دیکھوں 

شام کا دھندہلکا ہے یا اداس مامتا  ہے 
بھولی بسری یادوں سے پھوٹ تی دعا  دیکھوں 

لہر لہر پانی میں ڈوبتا   ہوا سورج 
کون مجھ میں در آیا اٹھ کے آئینہ  دیکھوں 

لہلہاتے موسم میں تیرا ذکر شادابی 
شاخ شاخ پہ  تیرے نام کو ہرا  دیکھوں


ندا فاضلی 



Tuesday, April 26, 2016

دھند 31

ہسپتال سے گھر تک کے فاصلے میں اسے اتنا وقت مل گیا کہ وہ اپنے سیل فون  پر موجود  غیر جوابدہ کال کا جواب دے سکے  
امی اور بابا کو فون پر زینیا کی تازہ ترین صورت حال سے مطلع کرنے کی بعد  وہ انہیں اپنے گھر جانے کے  بارے میں بتانے لگا، اسے چند گھنٹوں کی نیند کی شدید ضرورت تھی تا کہ وہ جلد از جلد تازہ دم  ہو سکے ، ویسے بھی اس کے والدین خود زینیا شاہ کی عیادت  کے لیے ہسپتال جانے والے تھے 

شیرل  کی کافی ساری  فون کالز  کا اس نے کوئی جواب نہیں دیا تھا ،  وہ عمو ما  اتنے فون کالز نہیں کیا کرتی تھی،، کیوں کہ وہ جانتی تھی کہ عمر کو یوں تنگ کیے  جانا بلکل نہ پسند ہے  ، مگر شاید اس بار صورت حال مختلف تھی، اور یہ اس کی ڈھیر  سری کالز دیکھ کر ہی اسے اندازہ ہو گیا تھا ، وہ اس شہر میں اس کی ذاتی مہمان ہی نہیں اس کی سب سے پرانی اور عزیز دوست بھی تھی ، یہ تو حالات  کچھ ایسا رخ اختیار کر گئے تھے کہ وہ اسے وقت نہیں دے پا رہا تھا 

وہ  بہت سنجیدگی سے عمر کے بارے میں فکرمند تھی  جب اسے یہ علم ہوا کے وہ دو دن بعد  ابھی گھر جا رہا تھا
 اور خاص طور ور یہ جان کر ک وہ ان اڑتالیس گھنٹوں میں بلکل نہیں سویا تھا 

"اور کھانا؟ کھانا کب کھایا تم نے؟" وہ پھر سے پرانی والی شیرل بن چکی تھی 

" مجھے بھوک نہیں ہے، میں صرف سونا چاہتا ہوں ، کھانا اٹھ کر کھا لوں گا "

" اور کب بناؤ گے  کھانا؟ اتنی ہمّت ہے  تم میں\؟"

"میں آرڈر کر دوں گا ، تم فکر نہ کرو "

"اگر تم برا  نہ مانو تو  ،میں تمہارے گھر آ جا وں ، تم سو لینا تب  تک میں کھانا بنا لوں گی "

کوئی اور موقع ہوتا تو  عمر کبھی انکار نہ کرتا ،  اور ایسا پہلی بار نہیں تھا کہ انہوں نے ایک دوسرے کی گھر پر وقت نہ   گزارا ہو،  مگر نہ جانے کیوں عمر کو اب تنہائی میں شیرل کے ساتھ  کا سوچ کر بھی الجھن ہو رہی تھی اور وہ غلط نہیں کر رہا تھا  اگر اپنی تھکاوٹ اور نیند کی کمی کو اس کا ذمہ دار سمجھ رہا تھا 
سو اس نے بڑی  سہولت سے اسے انکار کر دیا ، مگر  کھانا کھا کر سونے کا وعدہ  عمر کو کرنا ہی پڑا 

===================================

داور  نے اپنے والدین کو اکٹھے ہسپتال کے اندر داخل ہوتے دیکھا، اور ایسےلمحے  کئی  سالوں سے اس کی زندگی میں 
نہیں اے تھے ، اس کے باپ نے بھینچ کر اسے سینے سے لگایا اور اس کا ماتھا  چوما تو ان کی آنکھوں میں چمکتے آنسو اسے بہت واضح دکھائی دیے ، کتنی بے بسی تھی کہ وہ دونوں ایک دوسرے سے اپنے آنسو چھپا رہے تھے 

اس کی ماں خاموش کھڑی اسے تکتی رہی، شاید اس کی یادداشت میں یہ والا داور  اپنا وجود نہیں رکھتا تھا، وہ خود آگے بڑھ کر انہیں پیار کرنے لگا، وہ تو انہیں نہیں بھولا تھا، کیا تھا اگر کسی بیماری نے اس کی ماں کی یادیں بھلا دی تھیں 

وہ تینوں مل کر ای سی یو کی جانب بڑھنے لگے چوں کہ وہاں ایک وقت میں ایک ہی فرد کے جانے کی اجازت تھی  اس لیے پہلے احسن شاہ بخاری اندر چلے گئے وہ ماں کے ساتھ باہر کھڑا شیشے کی دیوار کے اس پار بے خود سوئی  ہنی شاہ کو دیکھتا رہا 

کتنے دنوں بعد آج وہ  ایک خاندان کے طور پر اکٹھے ہوے تھے  مگر یوں کہ وہ جو سب ہی کی عزیز از جان تھی وہی بے خبر تھی ، ایک لمحے کو داور  کا جی چاہا کہ اسے جھنجھوڑ کر اٹھا  دے اور کہے دیکھو ہم سب یہیں ہیں ،دیکھو ہم سب تم سے اب بھی ویسی ہی محبّت کرتے ہیں ، آؤ ، واپس لوٹ آؤ 

جانے والوں کا لوٹنا  اتنا آسان نہیں ہوتا ، مگر  صبر اور یقین دو ایسی قوتیں  ہیں جو  گم شدہ لوگوں کو اپنوں تک واپس لے آتی ہیں 
اور داور  نے اسی یقین کے ساتھ ای سی یو  کی اس مقفل دنیا میں قدم رکھا تھا 

=============================







Monday, April 25, 2016

دھند 30

اس کے آفس میں کمپیوٹر کی بڑی  سکرین پر جونز ہوپکنز ہسپتال کی مورننگ میٹنگ کا منظر وڈیو کونفرنسنگ کے ذریے  دکھائی دے رہا تھا   جونز ہوپکنز ، جو بالٹی مور ، امریکا کی ایک مشہور یونیورسٹی ہے، اور جس کے ساتھ ڈاکٹر عمر حیات وزیٹنگ فیکلٹی کے طور پر کافی عرصے سے منسلک بھی تھا. کی اس  با قا عد گی سے ہونے والی  اس میٹنگ میں نیورولوجی  کے وارڈ  سے متعلق  سارے ڈاکٹر حضرات  اکٹھے ہوتے تھے ، عمر حیات کے تجویز پر آج وہاں ڈاکٹر زینیا شاہ کا کیس زیر بحث تھا. وڈیو کونفرنسنگ کے ذریے  عمر  اس میٹنگ  میں شامل ہوے تھے، پہلے انہوں نے کیس پرزنتشن  دی اور اس کے بعد سینئراور  ماہر نیورولاجسٹ اپنے سے کم تجربہ کار ڈاکٹروں سے اس بےہوشی  کی ممکنہ  وجوہات اور  اس کے ہونے والے علاج کے   اقدامات کے بارےمیں استفسار کرنے لگے ، گو کہ یہ  مورننگ میٹنگز کا معمول تھا اور عمر حیات اکثر ان میٹنگز میں پاکستان میں ہوتے ہوے بھی شرکت کرتا رہتا تھا مگر اس وقت اسے صرف اس بات میں دلچسپی تھی  کہ یہ ماہر ڈاکٹر حضرا ت مل جل کر کسی ایسے نتیجے پر پہنچ سکیں جہاں سے زینیا کے ہوش میں انے کی کوئی سبیل بن سکے 

"اس کے آفس کے با ہر "پریشان نہ کیا جاے "   کا بورڈ چسپاں تھا ، اور اس کا اسٹاف جانتا تھا کہ کسی شدید ایمرجنسی کے علاوہ اس وقت ڈاکٹر عمر کو بلایا نہیں جا سکتا .

اس کا  ذہن  جیسے کہر  آلودہ تھا. گویا کسی گہری دھند میں لپٹا ہوا کوئی حسین منظر ، جو سامنے ہوتے ہوے بھی آنکھوں سے اوجھل ہو رہا ہو. ویسے ہی تشخیص کا کوئی سرا  تھا جو ڈاکٹر عمر حیات کے ہاتھ نہیں آ رہا  تھا 

میٹنگ کے اختتام پر وہ لوگ جن نتائج پر پنہچے تھے ان میں سے ایک انتظار بھی تھا . اور یہی سب سے مشکل مرحلہ تھا ، کیوں کہ ایک طرف زینیا کی فیملی تھی جنہیں سنبھا لنا تھا اور دوسری جانب اپنے اندر جاری جذباتی جنگ تھی جس نے ایک بلکل نیا محاذ کھولا ہوا تھا 

وہ سر تھامے بیٹھے ہوے سوچوں میں گم  تھا جب سیل فون  کی ویبرشن محسوس ہوئی. کوئی اور ہوتا تو شاید وہ پرواہ نہ کرتے مگر  وہ داور  تھا جو بڑی  افرا تفری میں بالٹی مور سے نکلا تھا . وہ اسلام آباد ائرپورٹ  سے مخاطب تھا اور  اپنی آمد کی خبر دینے اور زینیا کی طبعیت  کے بارے میں استفسار کر رہا تھا . گو کہ عمر حیات کے پاس کوئی اچھی خبر تو نہیں تھا مگر امید تو تھی اور اس نے داور تک وہی امید پنہچا دی 

ہسپتال  پہنے میں اسے زیادہ سمے نہیں لگا تھا ، زینیا کو بےہوشی  سے جگانے کے لیے اس نے چند ناکام کوششیں کیں  مگر پھر دل گرفتہ سا ہو کر پیچھے ہو کر خاموشی سے اسے تکنے لگا. کئی  سالوں کا فاصلہ تھا ان دونوں بہن بھائی  کے درمیاں ، جب سے  اس نے داور  کے سمجھانے  کے با وجود الی زبیری کی سنگت نہیں چھوڑی  تھی وہ اس سے بہت باقائدگی سے ناراض ہو چکا تھا ، دونوں کے درمیان ذہنی فاصلے پھر بھی نہیں پیدا ہو پاتے  تھے ، وہ اب بھی اسے اتنی ہی عزیز تھی جتنا  اس رشتے کا تقاضا تھا . افسوس تو اسے اپنے رویے پر ہوتا رہا  کہ اتنے لمبے عرصے کے لیے اس نے اس سے رابطہ منقطع رکھا  اور اب جب  وہ اس چپ کی کیفیت میں نہ جانے کتنے عرصے کے لیے گمشدہ ہو چکی، اب وہ اس سے  کتنی باتیں کرنا چہ رہا تھا 

اپنی آنا  کے زعم  میں ہم کبھی کبھی بہت سا قیمتی سمے  گنوا دیتے ہیں 

عمر حیات کے دفتر میں بیٹھے وہ یہی سوچ رہا تھا جب عمر اندر داخل ہوا . دونوں ایک ہی کیفیت سے گزر رہے تھے، نہ دونوں دو دن سے سوے تھے نہ ہی اپنا  لباس ہی تبدیل کر پے تھے . داور  کے لیے عمر کو یوں اس حال میں دیکھنا کچھ اچھنبے  کی کیفیت میں مبتلا کر گیا ، کیوں کہ عمر حیات کو اس نے ہر حالت میں بڑا مضبوط پایا تھا ، 

"عمر تم کب سے ہسپتال میں ہو؟"  گھر بھی گئے یا نہیں؟

"نہیں کچھ حالات ہی ایسے ہو گئے تھے ، پھر وہاں جونز ہوپکنز میں میٹنگ بھی ارینج کروانی تھی ، جو گھر بیٹھے ہو نہیں سکتا تھا "
"اب چلے  جاؤ ، میں ہوں ب یہاں:

"نہیں میرا خیال ہی تم گھر جا کر انکل آنٹی  سے ملو، میں ابھی یہیں ہوں" کوفی کے گھونٹ بھرتے ہوے اس نے کہا 

"نہیں، ڈیڈ  سے میں یہیں مل لوں گا،  وہ یہیں آ رہے ہیں ، تم نکلو اب، وہ تمہارے لیے بھی بہت پریشان  ہو رہے ہیں "

اور پھر داور  نے زبردستی لالہ  کے ساتھ ڈاکٹر عمر  حیات کو اس کے گھر روانہ کیا  اور زینیا کو دیکھنے ای سی یو کی جانب چل دیا 
===========================================

Thursday, April 21, 2016

پگڈنڈی

وہی موڑ ہے  نا 
دیکھو . جہاں 
چپ چاپ درختوں پر 
سفر بے نام لکھا  تھا 
فصیل نا  آشنائی  تک 
جو پگڈنڈی جاتی تھی 
وہ پلٹ کر بھی تو آتی تھی 
تم نے جب  موڑ کا ٹا  تھا 
زرد پتے  لمحوں کے 
چپ چاپ درختوں سے 
ٹوٹ کر آ گرے  تھے 
فصیل نا آشنائی کے اسطرف  
کبھی جھانکو 
سفر کی شام ابھی  ڈھلی نہیں 
سلگ رہی ہے  
کہ اس کے مچلتے  ساے  میں 
وہ پگڈنڈی یوں ہی  
پلٹ  کر مجھ تک آتی ہے 

Tiny Ray

It was so magical to stay awake then
It is so relieving to sleep now
And amidst those enchanting memories
a tiny ray of wishful thinking burns
which  desires to go back in time

Tuesday, April 19, 2016

Tragedy of creative people

Fascination, dreams and curiosity
May make you
Draw,  write or compose
Quite ordinary or a masterpiece
Whatever it May be
Creativity  needs inspiration,
Fascination and dreams. 

Monday, April 18, 2016

Mild difference

There is a mild difference
in distance and togetherness
The butterflies colored me rainbow
When you stayed near
To see their color,  now
I have to run a mile
When you are not in sight
This is the difference
In distance and togetherness. 

Tuesday, April 12, 2016

Trailing memories

You planned, but did not plan well
the twist in the story where
you had to leave the stage of
this well played drama,
You dropped some memories
right behind your footsteps
If this was the moment where,
your act in the play ended, then
you should have packed well
and should have taken away
all those trailing memories.

Monday, April 11, 2016

It was you

It was so easy to find you then
It's so hard to imagine you now

It was an image that brought us together
It is a dream that made us apart

It was a truth what I saw in your eyes
It is a fact, it was all a lie

It was a connection that ran in our nerves
It is a misery that rushes in the blood

It was you and you alone then
It is I, and I alone , now.




Saturday, April 9, 2016

دھند 29

وہ  بہت خاموشی سے اس کے سرہانے موجود اس کے سانس کے زیر و بم گن رہا تھا ، اس کی بند  آنکھوں کے پیچھے چلنے والے  خوابوں  کے گم شدہ رستے  ڈھونڈ رہا تھا ، جن پگڈنڈیوں پر وہ کھو چکی تھی  وہاں اس کے  نقش پا تلاش رہا تھا 

شب کے ڈھا ئی  بجے اس وقت جب آئی  سی یو کے مریضوں اور اسٹاف میں  کوئی بے چینی نہی تھی ، وہ بہت خاموشی سے زینیا شاہ کے بستر کے کنارے آ کھڑا ہوا تھا، چوبیس سے زیادہ گھنٹے گزر چکے تھے ، وہ ہوش میں نہیں آئ  تھی اور اتنے ہی گھنٹے ہو چکے تھے جب وہ ہسپتال سے گھر نہیں گیا تھا ، وہ اسے یوں چھوڑ کر کیسے جا سکتا تھا 

عمر کو خود پر جتنی حیرت  آج تھی پہلے نہیں ہوئی تھی. وہ اپنے آپ کو کسی بھی قسم کی جذباتیت سے بہت دور پتا تھا ، وہ بہت پریکٹیکل انسان تھا . نرم دل ہونا، ایک اچھا رحم دل ڈاکٹر ہونا کچھ اور تھا ، اور کل سے اس وقت تک زینیا شاہ کی بیماری  سے وجود میں  در انے والی اس کیفیت کا سلسلہ ہی کچھ اور ہی تھا ا 

بعض  لمحے زندگی میں آتے ہی اسی لیے ہیں کہ انسان وہ جان لے جو اب تک نہیں جان پایا تھا 
ڈاکٹر عمر کے لیے یہی لمحہ آگہی کا تھا، وہ وہ جان رہا تھا جس کے ماننے کو جھٹلاتا آ رہا تھا 

اس نے کچھ آگے بڑھ کر اس کی پیشانی پر آ جانے والے بالوں کو دھیرے سے پیچھے کیا 
اس لمحے شدّت سے اس کا جی چاہا  کہ وہ جھٹ سے آنکھیں کھول کر اس سے خوب لڑے ، کہ اس نے یوں اسے چھوا ہی کیوں ، وہ ایسی ہی تھی، محرومیوں  کے ڈسے ہوے لوگ یونہی ہوتے ہیں ، انہیں محبتیں اور شدّتیں ملنے لگیں تو اس پر بھی شک کرنے لگتے ہیں 

ڈاکٹر عمر کے ذہن  پر گزرے کئی برس تیزی سے گزرنے لگے 

ہنی شاہ ، جو احسن انکل کی بیٹی اور اس کے دوست داور کی بہن تھی، جس کا اس نے ہمیشہ ذکر سنا تھا مگر اس سے کبھی ملاقات نہیں ہوئی تھی کیوں کہ وہ مری  کانونٹ میں پڑھتی تھی اور  گرمیوں یا سردیوں کی تعطیلات میں  وہ ملک سے باہر چلا جایا کرتا تھا 

اس کے ذھن میں ہنی شاہ سے متعلق تجسّس جگانے والی اس کی امی تھیں یا شاید دونوں والدین کیو ن  کہ  وہ اکثر اس کا ذکر بہت مختلف اور خصوصی انداز میں کیا کرتے تھے ، چوں کہ عمر کا میڈیکل میں داخلہ ہو چکا تھا اور  وہ پڑھائی کے سلسلے میں امریکا جا رہا تھا ، وہ اس کی نسبت طے کر دینا چاہتے تھے اور چنی جانے والی لڑکیوں میں ہنی شاہ کا نام سر فہرست تھا 

عمر کے شدید احتجاج پر یہ معاملہ موخر کر دیا گیا تھا مگر اس کے ذھن میں ہنی شاہ سے متعلق  ایک بیج بو دیا گیا تھا ،  جس کی جڑیں انجانے ہی میں اتنی گہری ہو چکی تھیں کہ کب وہ خوبصورت درخت بن کر اس کی ذات کے اندروں میں پلنے لگا، وہ جان ہی نہیں پایا تھا 

پھر اسلام آباد واپسی پر بھی وہ کبھی اس سے نہیں مل پایا ، چند سالوں بعد جب وہ اپنی گریجویشن کے نزدیک پہنچ چکا تھا  اسے علم ہوا کے وہ بھی میڈیکل کی طالبہ بن چکی تھی اور ماڈلنگ کے شوق بھی پورے کر رہی تھی 

عمر کے لیے اب اسے دیکھنا آسان تھا، انٹرنیٹ پر وہ ہر اس میگزین اور ایڈز اور کیٹ واک کا ریکارڈ رکھنے لگا جہاں وہ مجود ہوتی 

علی زبیری اس کی زندگی کا وہ واحد حصّہ تھا جس سے وہ بڑے عرصے تک بے خبر رہا ، ان دنوں وہ اپنے فیلو شپ میں بے انتہا مصروف تھا جب اسے امی کے زریے اس کی ہسپتال میں داخلے کی خبر ملی ، مگر یہ اس کے لیے صرف ایک خبر تھی، دل پر کوئی بھی اثر نہ کرنے والی خبر، کیوں کہ ہنی شاہ اس کے لیے صرف ایک نام تھا، کوئی احساس نہیں 

وہ جانتا تھا، جس ماحول میں وہ موو کرتی ہے اس کے لیے یہ سب ایک معمول کا واقعہ ہے ، ہاں احسن انکل کی فیملی کے لیے یہ ایک صدمہ تھا جس کے سلسلے میں وہ داور  سے مستقل رابطے میں تھا 

اور اب ان چند مہینوں میں جب سے اس نے ہنی شاہ کی ڈاکٹر زینیا شاہ کے روپ میں دیکھا  اور محسوس کیا تھا، اب صورت حال بلکل مختلف تھا 
اب اس سرے قصّے میں ڈاکٹر عمر نہ چاہتے ہوے بھی شامل ہو چکا تھا ، کیوں کہ زینیا شاہ اب صرف ایک نام نہیں تھا 
خون میں گردش کرنے والا، ہر دم رواں رہنے والا،  احساس تھا 

====================================================

دھند   

We have seen

We have seen those days when
butterflies rested on our palms
when the colors were our drapery
and the rain was a favorite melody
when silence used to speak louder
and words brought us even closer
when eyes were brighter than stars and
the breaths were fragrant than flowers
when dreams were the only reality
when nights transformed into memory
We have seen those days, yes though
how distant and unreal they may seem
We have seen them, really.



Monday, April 4, 2016

دھند 28

  "سر  ایک بات کہوں؟" . وہ  نرسنگ سٹیشن پر کھڑا زینیا کے دوبارہ کے جانے والے چیک اپ کے نوٹس لکھ رہا تھا  جب  اس نے سٹاف اگنس کو کہتے سنا 

"جی سٹاف کہیے"  اس نے تھکے لہجے میں جواب دیا  "سر ، آپ کچھ آرام کر لیں ، میں آپ کی پشینٹ کو آبزرو کر لوں گی تب تک . چار  تو بج چکے ہیں ، صبح پھر مورننگ میٹنگ اور راؤنڈ  بھی لینا ہوگا آپ کو"

"اسٹاف بہت شکریہ آپ کا ، مگر یہ آپ بھی جانتی ہیں کہ ایک ڈاکٹر کو اسے سے بھی زیادہ مشکل ڈیو ٹیز  کرنا پرتی  ہیں ا. میں اس سب کا عادی ہوں ، آپ پریشان  نہ ہوں. " 
پھر کچھ ٹھہر کر وہ دوبارہ گویا ہوا 
"ایک مہربانی اور کر دیں ، میرے لیے ایک کافی منگوا دیں پلیز."

"سر کہنا تو نہیں چاہیے مگر آپ خود سمجھتے ہیں بغیر کچھ کھا ے  یہ آپ کی پانچویں کافی ہے. آپ کی گیسٹرک لائننگ کو
 نقصان پہنچ رہا ہے "
وہ دھیمے سے مسکرا دیا " یہ سٹاف اگنس ہی تھیں جو ڈاکٹر عمر سے اس حد تک ذاتی گفتگو کر سکتی تھیں "
"میں بیڈ  ٢١٥ کو دیکھ لوں، آپ بلیک کافی بھجوا دیں پلیز." 
سٹاف اگنس انہیں وارڈ  کی طرف جاتا دیکھتی رہیں 

==========================================================

عجیب بے کلی سی تھی. یہی ہسپتال تھا جس سے وہ کئی  برسوں سے منسلک تھا، یہی کوریڈور ، یہی دیواریں، یہی وارڈز ، یہی آئ  سی یو  تھا جہاں وہ دن کا بیشتر وقت مریضوں، نرسنگ سٹاف اور ساتھی ڈاکٹرز کے ساتھ گزارتا  تھا . آج یہی جگہ اجنبی لگ رہی تھی، آج اسے جتنی بے بسی محسوس ہو رہی تھی، پہلے کبھی نہیں ہوئی تھی. 
 ٹھیک ہی کہتے ہیں لوگ ، دوسروں کا علاج آسان ہوتا ہے ، اپنوں کا علاج کرنا وہ بھی کسی بہت قریبی شخص کا ، ایک  critical thinking ڈاکٹر کے لیے بہت مشکل ہے ، کیوں کہ جب جذباتیت شامل ہو جاتے  سوچوں میں تو 
پس پشت چلی جاتی ہے . آپ ٹھیک سے بلکل وہ فیصل نہیں کر پا تے جو وقت کا تقاضا ہوتا ہے . 

وہ بھی فیصلہ نہیں کر پا رہا تھا کہ اگلا قدم کیا ہونا چاہیے . 
کیوں کہ وہ بھی کسی اپنے کا علاج کرتے ہوے جذباتیت کا شکار تھا 
"اپنا" وہ کب اپنی تھی؟ یا کب اپنی بن گئی تھی؟، اور کیا واقعی اس سے کوئی قریبی رشتہ تھا؟ کوئی جذباتی تعلّق تھا؟
 lost love     وہ تو اب تک اپنے     
کا سوگ منا  رہی تھی   . خود پر طاری  ہوتے غصّے کو روکنے کے لیے اس نے مٹھیاں بھینچی تھیں 
کون ہے یہ علی  زبیری ؟ " اسے شدید  بے چینی ہوئی . گوگل نے اچھے دوست کی طرح بر وقت   مدد کی اور اب وہ اسے دیکھ  بھی رہا تھا اور اس کے باری میں معلومات بھی حاصل کر رہا تھا 
اور سب کچھ جان لینے کے بعد اسے صرف اس احساس سے الجھن ہو رہی تھی کہ زینیا شاہ ، ڈاکٹر زینیا شاہ اس انسان سے محبّت کر سکتی تھی؟

============================================================= 

سٹاف اگنس  اپنی ڈیو ٹی  سے  فارغ ہونے سے پہلے مورننگ فالو اپ کر رہی تھیں. آی  سی یو میں موجود ایک عمر رسیدہ  مریض کی چادر درست کرتے ہوے انہیں کسی غیر معمولی بات کا احساس ہوا . انہوں نے مڑ کر دیکھا .کچھ بھی نہیں تھا ، مگر انہیں کوئی شک سا ہو رہا تھا . . اس مریض سے فارغ  ہونے کے بعد  وہ خاص طور پر ڈاکٹر عمر  کی مریضہ خاص کی جانب آئیں . ان کا شک غلط نہیں تھا ، ڈاکٹر زینیا کے جسم میں ہلکی سی حرکت ہوئی تھی، اس نے اپنا کنولا لگا ہاتھ اٹھا کر پھر واپس نیچے رکھا تھا . ان کی ماہر نظروں نے فورا یہ جانچنے کی کوشش کی کہ کنولا لگے ہاتھ میں سوجن تو نہی ہے ، مگر اس سے بھی پہلے ان کا ذھن انہیں ڈاکٹر عمر کو وہاں بلانے  کی ہدایت دے رہا تھا ، انہوں نے اگلے ہی لمحے میں ڈاکٹر عمر کو فون کر کے آئ  سی یو  آنے کو کہا  اور دوسرے لمحے زینیا شاہ کو نام لے کر پکارا.. وہاں کوئی حرکت نہیں تھی 
چند ثانیوں میں ڈاکٹر عمر وہاں موجود تھے 
سٹاف اگنس نے ساری روداد کہ سنائی ، اور ٹھیک اس لمحے انہوں نے ڈاکٹر عمر کی آنکھوں کو روشن ہوتا دیکھا تھا 
پھر وہ جھک کر اس کے کنولا لگے ہاتھ کا موا عنہ کرنے لگیں جب کہ عمر نےاس کا دوسرا ہاتھ اپنے ہاتھ میں تھام کر اسے پکارا 
"زینیا" تم مجھے سن رہی ہو نہ؟

زینیا ، مجھے پتا ہے  تم جاگ رہی ہو ، ایک بار آنکھیں کھول کر دیکھو "

کوئی حرکت نہیں تھی، کوئی جواب نہیں تھا 
انہوں نے پالت کر اس کی دھڑکن اور سانس سے جڑے آلات کو دیکھا، سب کچھ بلکل مناسب تھا ، صرف اس کا ذہن کہیں کھویا ہوا تھا \عمر نے اس کے ہاتھ پر کچھ اور دباؤ بڑھایا ، وہ درد دے جانے کے جواب میں اس کے دماغ کا  رسپانس دیکھنا چاہ رہے تھے . مگر ایک بار پھر انہیں مایوسی ہوئی ، وہ اسی خاموشی سے سو رہی تھی 

"ہنی " پہلی بار شاید پہلی ہی بار تھی جب انہوں نے اسے اس نام سے پکارا جس نام سے  اسے ہمیشہ سے جانتے آے  تھے. اپنی فیملی، اور دوستوں کے درمیان وہ اسی نام سے جانی جاتی تھی 

سٹاف اگنس  کے لیے یہ کسی اچھنبے سے کم نہیں تھا . وہ ڈاکٹر عمر کے اس خوبصورت مریضہ کے ساتھ کسی گہرے  
تعلق  کے بارے میں اب کسی شک کا شکار نہیں رہی تھیں 

====================================================================












Tangible moments

One can not deny the significance of separation
The feelings that can not be expressed
are penned and saved
and then , in the moonlit nights
as the memories arise 
They can be re opened
as tangible moments

Sunday, April 3, 2016

Interview

Making history

Those who are lost
not easily found
those ,easily found,
not easily stay.
those do not love, may
find exuberance
those suffer in love
would seek indulgence
The feelings and missings
the tellings and hearings
the comings and goings
are not ordinary,
when and if, penned down,
would be making history.



Thursday, March 31, 2016

دھند 27

تھکن سے نڈھال جب وہ گھر میں داخل ہوے تو انہیں یہاں کی خاموشی ہمیشہ سے کہیں زیادہ محسوس ہوئی . داور  اور ہنی کی کمی  کا احساس شدید ہو گیا ، انہیں کسی سہارے کی ضرورت تھی، کسی سے حال دل کہنے کی حاجت تھی، کتنا تلخ سچ ہے یہ کہ انسان چاہیے کتنا بھی مضبوط ہو ، کتنا ہی با اختیار ہو ، اسے سہارے کی ضرورت  پھر بھی ہوتی ہے ، اسے کسی ہمراز کی، کسی ساتھی  کی ضرورت پھر بھی ہوتی ہے 

کمرے  میں آے  تو منظر وہ نہیں تھا ، جس کی انہیں امید تھی. وہ خلاف توقع  جاگ رہی تھی ، اور یوں تیار تھی جیسے ابھی کسی  پارٹی میں جانے کا وقت  ہو رہا ہو.. نیلی ساری  میں فیروزے کے ایررنگز  پہنے ، اور بہت مہارت سے  میک اپ کیے ، وہ آج بھی اتنی ہی حسین تھی کہ چند لمحوں کے لیے احسن شاہ بخاری یہ بھول گئے کہ وہ بیمار تھی.

"تم آ گئے؟ ، میں کب سے تمہارا انتظار کر رہی تھی " وہ قریب آ کر کہنے لگی/

"سارا ، ہماری بےبی  ہسپتال میں ہے " اسے شانوں سے تھام کر جیسے وہ حوصلہ کھونے لگے "

"ہماری بے بی ؟" وہ اجنبی سے احساس کے ساتھ ینہیں دیکھنے لگی "
"ہاں ہماری ہنی ، ہماری زینیا ."
"ہنی؟ یہ کون ہی؟ میں اس نام کی کسی لڑکی کو نہیں جانتی. پھر کوئی نئی دوست بنا لی تم نے؟"

"احسن شاہ نے آنکھیں میچ کر اپنے دکھ کو بیہ جانے سے روکا ، نہیں یہ صرف ایک واہمہ تھا کہ وہ ٹھیک ہو گئی ہے "

" اچھا تم اب سو جاؤ ، میں بھی تھک چکا ہوں" ان کی آواز جیسے کسی کنوئیں سے آتی محسوس ہوئی."

"نہیں، ہمیں تو پارٹی میں جانا تھا نہ ، میں کب سے تمہارا انتظار کر رہی تھی، تم نہیں سو گے، تم میرے ساتھ چلو گے" وہ ضد  کرنے لگی 
اسی لمحے ان کا سیل فون شور مچانے لگا 
"داور " کا  نام دیکھ کر وہ بےچینی اور سکون  کی کسی درمیانی کیفیت میں چلے گئے . 
وہاں وہ شکوہ کناں تھا کہ اسے خبر کیوں نہیں کی گئی  اور وہ ہنی کی طبیت پوچھتے ہوے بے قرار تھا . اور ایسا پہلی بار تھا کہ احسن شاہ بخاری نے اسے فوری طور پر پاکستان آنے کو کہا ہو ، ورنہ وہ ہمیشہ اس کی  مصروفیت کو فوقیت دیا کرتے تھے 

"کون تھا فون پر؟" وہ پوچھنے لگی، احسن شاہ کو پھر پرانے زمانے یاد آنے لگے، جب وہ یونہی ان پر شک کیا کرتی تھی ، اور تب انہیں سخت غصّہ آیا کرتا تھا ، اور اب اس کا پوچھنا بھی نعمت لگتا تھا، ایسا لگتا تھا کہ وہ صحت مندی کی جانب لوٹ رہی ہو، شاید وہ سب کچھ جو وہ بھولتی جا رہی تھی، وہ اسے یاد آ جاے ، شاید وہ وہی سارا بن جاے جس سے انہوں نے عشق  کیا تھا جو ان دو خوبصورت بچوں کی ماں تھی، جو اب اپنے بچوں کو بھی بھولتی جاتی تھی 

سگریٹ سلگا کر کھڑکی کے پاس کھڑے وہ بہت بے قرار تھے 

کیا نہیں تھا ان کے پاس ، ایک رشک آمیز زندگی، ایک خوبصورت جیوں ساتھ، دو  ہونہار بچے ، دولت، اور نام 

اور کیا تھا ان کے پاس؟ 
سکوں کا کوئی ایک لمحہ، سچی خوشی ، نہ  وہ ساتھ جس سے وہ دل کی بات کہ سکتے، نہ اولاد  کو خوش دیکھنے کا سکھ ، نہ  مکمّل خاندان کا طمانیت بھرا احساس. 
اور اب ان کی جان سے عزیز بیٹی ہسپتال میں بے ہوش پڑی تھی اور وہ اپنا ساری  دولت خرچ کر کے بھی اس کے لیے کچھ نہیں کر پا رہے تھے 

آج یوم حساب تو نہیں تھا 
مگر ان کی روح ان سے حساب مانگ رہی تھی  




Tuesday, March 29, 2016

words are truth

Words are the ultimate truth.

While composing the final draft of my book I found this poem and realized, what I wrote was so true, even though I didn't know it would turn up into a harsh reality.

Yes I ceased to express, all my pain, words and even whispers, for there is a time to reconnect, to show feelings, to endure a bond, once that time is passed, you are still like a sculpture, like the Buddha that  remained silent for years in his gyan. 




Ask me

Ask me, if you wanna know
The reason of my stitched lips
Some words are not for the world
Some whispers are only for the one
Some secrets are read in the eyes
Some pains are reflected in the soul
Ask me, before I cease to express

The pain, the words, the whispers.

Across horizon

Sometimes its only takes a word, an image, a page, a small act, to remind of all those moments which are lost in the extent of horizon.

Existing yet hidden.