Featured Post

Something else

No its not writer's block Its something else Just wondering why am I not writing much these days!

Thursday, April 21, 2016

پگڈنڈی

وہی موڑ ہے  نا 
دیکھو . جہاں 
چپ چاپ درختوں پر 
سفر بے نام لکھا  تھا 
فصیل نا  آشنائی  تک 
جو پگڈنڈی جاتی تھی 
وہ پلٹ کر بھی تو آتی تھی 
تم نے جب  موڑ کا ٹا  تھا 
زرد پتے  لمحوں کے 
چپ چاپ درختوں سے 
ٹوٹ کر آ گرے  تھے 
فصیل نا آشنائی کے اسطرف  
کبھی جھانکو 
سفر کی شام ابھی  ڈھلی نہیں 
سلگ رہی ہے  
کہ اس کے مچلتے  ساے  میں 
وہ پگڈنڈی یوں ہی  
پلٹ  کر مجھ تک آتی ہے 

No comments:

Post a Comment