Featured Post

Something else

No its not writer's block Its something else Just wondering why am I not writing much these days!

Tuesday, May 17, 2016

بس اک ہی نام

رات سن رہی تھی 
اندھیرے کی چلمن  کے اس  پار  
سانس کی تسبیح  پر 
ورد کیا جانے  والا 
وہ بس اک ہی نام   
جو لہو   کی خلوتوں میں 
مانند طواف  گھومتا تھا 
کہ آنکھ  غافل  ہو بھی جاے 
نہ سانس رکتی  ہے 
نہ لہو تھمتا ہے 
اور رات 
وہ پھر لوٹ آتی ہے 
اور سنتی رہتی ہے 
اندھیرے کی چلمن کے اس پار 
وہ بس اک ہی نام 

نازش امین 

No comments:

Post a Comment