Featured Post

Something else

No its not writer's block Its something else Just wondering why am I not writing much these days!

Sunday, August 13, 2017

ادھوری نظم

شب کے بولتے  سناٹے میں  
ہولے ہولےچلنے والی ہوا  
ڈھونڈتی پھرتی ہے 
ہجر کی گہری دھول میں لپٹی 
ایک ادھوری نظم 

جانے کتنے ساون بیتے
 قطرہ قطرہ   بہنے والی 
بوندوں کی جھنکاروں میں 
ایک اک مصرع  جوڑ کے ہم نے 
ایک نظم پروئی تھی 

دکھ سکھ کے قصّے تھے جس میں 
ہنسنے کی ملھار بھی تھی 
آنسو کے گھلتے ذائقے میں 
ہجر کی چبھتی پھانس بھی تھی 

اب کے ساون پھر ہے لوٹا 
تیرے میرے خواب لیے 
شب کے بولتے سناٹے میں 
ہولے ہولے چلنے والی ہوا 
لفظ ڈھونڈتی پھرتی  ہے 
میرا مصرع وہیں رکھا ہے 
تم اپنا مصرع بھجوا دو 

یاد تو دھول میں لپٹی رہے گی 
نظم مکمّل ہو جانے دو 


نازش امین 

شب کے بولتے سناٹے میں
ہولے ہولے ہوا چلی ہے
ڈھونڈتی کھوجتی بٹک رہی ہے
ہجر کی گہری دھول میں لپٹی
 ایک ادھوری نظم
جانے کتنے ساون بیتے
 قطرہ قطرہ بہنے والی
بوندوں کی جھنکاروں میں کوئی
ایک اک مصرع جوڑ کے ہم نے
نظم میں لفظ پرو ڈالے تھے
جس میں تھے دکھ سکھ کے قصّے
جس میں تھی ملہار خوشی کی
گھلتے آنسو کی آمیزش
ہجر کی چبھتی پھانس
اب کے ساون پھر لوٹا ہے
تیرے میرے خواب لیے شب
سناٹے میں ہولے ہولے
ہوا سرک کو کھوج رہی ہے
میرا مصرع وہیں پڑا ہے
بھجوا دو تم اپنا مصرع
یاد تو دھول میں لپٹ چکی ہے
نظم مکمّل ہو جانے دو

No comments:

Post a Comment