Featured Post

Something else

No its not writer's block Its something else Just wondering why am I not writing much these days!

Wednesday, July 18, 2018

زنِ حسین تھی

زنِ حسین تھی اور پھول چٗن کے لاتی تھی
میں شعر کہتا تھا وہ داستاں سناتی تھی

منافقوں کو میرا نام زہر لگتا تھا
وہ جان بوجھ کے غصہ انھیں دلاتی

میں تیغ لے کے نکلتا تو لوگ دیکھتے تھے
وہ اسم پڑہتی تھی اور بھیڑ چھٹتی جاتی تھی

عرب لہو تھا رگوں میں، بدن سنہرا تھا
وہ مسکراتی نہیں تھی، دیئے جلاتی تھی

اٗسے کسی سے محبت تھی اور وہ میں نہیں تھا
یہ بات مجھ سے زیادہ اسے رولاتی تھی

یہ پھول دیکھ رہے ہو، یہ اسکا لہجہ تھا
یہ جھیل دیکھ رہے ہو، یہاں وہ آتی تھی

میں کچھ بتا نہیں سکتا وہ میری کیا تھی علیؔ
کہ اسکو دیکھ کے بس اپنی یاد آتی تھی

علی زریون

Friday, June 22, 2018

نقش پا

وہ ایسا زخم تھا جو 
پھول بننے کی چاہ میں 
کھلا رہا 

وہ کوئی ستارہ جو 
صبح کی تلاش میں 
بھٹکتا رہا 

 وہ ایسا اشک تھا جو 
بہ جانے کی آس میں 
لرزتا رہا 

وہ ایک شعر جو 
داد پانے کی امید پر 
ان کہا رہا 

وہ اک حرف دعا  جو 
قبولیت کی تلاش میں 
گونجتا رہا 

وہ کوئی نقش ہاجرہ جو 
شدت پیاس سے 
جاری رہا 

وہ بس ایک پل جو 
دل کی دہلیز پر 
نقش پا رہا

نازش امین  

Thursday, June 14, 2018

Valley of dreams

Far far away
From this dusty land
Lies my valley of dreams
Nestled in the depth
Of huge green mountains
It is when this cruel world
With all its deceiving acts
Shatters me to pieces
With all its cunning people
Pickle me with their negativity
When I’m surrounded by
Falsehood and lies
And deeply wounded by
Barbarism and genocide
When I see beautiful children
Losing their eyesight
When I see women being
doomed by the mighty guys
It’s then I need somewhere to hide
To Seek refuge and to cry
I rush to my valley of dreams
Where there are birds and animals
Leaving behind vicious humans
Where there is nature and waterfalls
Where there is just me and my Lord


Tuesday, June 12, 2018

Full circle

Life comes a full circle
As they famously say
The floor tiles in the
Grandma's old house
The wooden  chair on which
Grand father used to recline
The bell bottoms my mom
So Fashionably wore
The hairstyles of sixties
I used to adore
That old filmi music
Which captured the soul
Everything, tiny to grand
Old yet getting back into trend
Makes me wonder how
Life comes a full circle
And yet how long still
Shall I have to wait
Before you turn back.

Friday, June 8, 2018

Wednesday, May 23, 2018

گماں کے پار

نیلے گگن پر دوڑنے والے 
سرمئی ، اودے بادل  تھے 
سرخ بنفشی اور سترنگی 
قوس قزح کی چلمن بھی 
ساون کی چھتری کے نیچے 
ہوا ابھی تک گیلی تھی 
مدھم مدھم سروں میں کوئی 
گیت ابھی گنگناتی تھی 
پت جھڑ میں کھلنے والے 
زرد گلابی پھول بھی تھے 
تیز سنہری دھوپ کے ساے 
مانند سولہ سنگھار ہی تھے 
کچے ہونگے ڈھل جاینگے 
یہ تو گویا گمان نہ تھا 
ہجر کی برستی بوندوں سے 
گھل جایں گے ،. دھیان نہ تھا 
ساون کی چھتری کے نیچے 
قوس  قزح بکھر رہی ہے 
پت  جھڑ کے موسم کی مانند 
ایک اک آس ٹوٹ رہی  ہے 
ہوا بھی چپ چاپ کھڑی ہے 
بادل  بھی ناراض سا ہے 
پھر بھی  گماں  کے پار کہیں 
تیرے انے کا دھیان  سا ہے 


نازش امین 



Wednesday, May 2, 2018

Missed to witness

That one low fat cappucino
in the morning rain of a distant valley
which was never sipped together

That one all time favorite book
the pages of which were marked
standing tall in a particular library shelf
to be touched and seen, but
couldn't be read together

That one long hour flight
to an unknown unexplored land
with a favorite movie on screen
a neck pillow and blanket,
some coffee and endless gossip
while sitting next to each other
couldn't ever become a reality

That endless walk by the river Seine
hand in hand with raindrops in hair
and a perfect photo shoot to follow
would be registered in the book of history
As all the precious moments
this world missed to witness